23

ہاکی فیڈریشن کی اولمپک کوالیفائر 2020 کی تیاری پر اولمپئینز کی کڑی تنقید!

ٹوکیو(ویب ڈیسک)پاکستان ہاکی ٹیم کو جاپان کے شہر ٹوکیو میں 24 جولائی 2020 کو شروع ہونے والے اولمپکس ہاکی مقابلوں کا ٹکٹ حاصل کرنے کے لیے عالمی درجہ بندی میں تیسرے نمبر کی ٹیم ہالینڈ کو شکست دینا ہوگی، اولمپک کوالیفائر میں پاکستان اور ہالینڈ کے درمیان دو میچ 26 اور 27 اکتوبر کو ایمسٹرڈیم میں کھیلے جائیں گے۔اولمپیئن سمیع اللہ کا کہنا تھا کہ ہاکی فیڈریشن کی ناقص حکمت عملی کے پیش نظرِ ہالینڈ سے جیتنا معجزے سے کم نہیں ہوگا۔فلائنگ ہارس کے نام سے مشہور اولمپئین سمیع اللہ نے کہا کہ فیڈریشن نے بہت سارے لوگوں کو جمع تو کر لیا ہے، البتہ تیاری صفر ہے۔انہوں نے کہا کہ چیف سلیکٹر اولمپئین منظور جونیئر نے تین ماہ پہلے ذمہ داریاں لے کر کمال کام کیا ہے، دوسری جانب انہوں نے مزید کہا کہ ہالینڈ اسی صورت میں ہار سکتی ہے کہ اگر اس کے چھ کھلاڑیوں کو ٹائیفائیڈ ہو جائے، اور چھ کھلاڑی شدید بخار میں مبتلا ہوں، بصورت دیگر اولمپک میں پاکستان ٹیم کا کھیلنا مشکل ہی دکھائی دے رہا ہے۔دوسری جانب 1992 کے بارسلونا (اسپین ) اولمپکس میں کانسی کا تمغہ جیتنے والی ٹیم کے رکن اولمپئین قمر ابراہیم کہتے ہیں کہ یہ درست ہے ہالینڈ سے مقابلہ کسی چیلنج سے کم نہیں ہوگا، تاہم اب مینجمنٹ کو اس چیلنج کو قبول کرتے ہوئے سر دھڑ کی بازی لگا دینی چاہیے اور جیت کے جذبے سے مقابلہ کرنا ہوگا، کیوں کہ اب ہمارے پاس اس کے سوا کوئی اور راستہ نہیں ہے۔قمر ابراہیم نے مزید کہا کہ ایشین ہاکی فیڈریشن کے سی ای او طیب اکرام سے رابطہ کرنا چاہیے کہ یورپ میں ہالینڈ سے مقابلے سے قبل ہمیں چند پریکٹس میچ دیئیجائیں، یہ ایک اچھا اقدام ہوگا، کیوں کہ ہمارے لیے آنے والی صورت حال خاصی مشکل دکھائی دے رہی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں