269

ڈی پی اوگجرات نے سرفراز انجم سیکھواور تفتیشی افسر کوڈسمس کردیاگیا

گجرات(پ ر)ڈی پی اوگجرات کاایکشن،سابق ایم پی اے میاں طارق کیس میں زیر حراست ملزمان کو حوالات کی بجائے علیحدہ کمرے میں رکھنے پر سابق ایس ایچ اوتھانہ کنجاہ سرفراز انجم اور تفتیشی افسر کومحکمہ سے ڈسمس کردیا تفصیلات کے مطابق چند روز قبل تھانہ کنجاہ سابق ایم پی اے میاں طارق کیس میں گرفتار ملزمان کی تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہوئیں تھیں جن میں ملزمان نعمان شفیع اور نوازش علی سکنائے رنیاں کو تفتیشی افسر کے کمرہ میں رکھا گیا تھا ۔جس پر ڈی پی او گجرات سید علی محسن نے واقعہ کا فوری نوٹس لیتے ہوئے SHOتھانہ کنجاہ سرفراز انجم ،تفتیشی افسر SIسہیل اسلم کومعطل کر کے شوکاز نوٹس جاری کیے اور ڈی ایس پی صدر سرکل کے پاس محکمانہ انکوائری لگا دی گئیں ۔جنہوں نے اپنی رپورٹ میں معطل افسران کو واقعہ کا ذمہ دار قرار دیتے ہوئے ان کے خلاف محکمانہ کارروائی کی سفارش کی۔جس پر ڈی پی او گجرات سید علی محسن نے اردل روم کے دوران سابق ایس ایچ او تھانہ کنجاہ SIسرفراز انجم ،تفتیشی افسرSIسہیل اسلم کو عہدوں میں تنزلی کرکے SIسے ASIکیا اور بعد اذاں دونوں افسران کو محکمہ سے ڈسمس کردیا جبکہ محرر کامران اختر کو 2سال سروس ضبطی کی سزا دی گئی ۔ڈی پی او گجرات سید علی محسن نے اس موقع پر تمام افسران کو سخت وارننگ دی کہ ملزمان کو پروٹوکول دینے والے افسران کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا اور محکمہ کی بدنامی کا باعث بننے والے ایسے افسران کو محکمہ میں نہیں رہنے دیا جائے گا ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں