گجرات (پ ر)سیکرٹری لیبر اینڈ ہیومن ریسورس لیاقت علی چٹھہ نے کہا ہے کہ حکومت پنجاب صوبے میں کاروبار کے فروغ کے لیے جامع ایس ایم ای پالیسی تیار کررہی ہے، پنجاب میں 11 لاکھ محنت کشوں کو لیبر کارڈ جاری کئے جائیں گے، صوبے میں اس وقت 39 لیبر قوانین ہیں، مزدوروں کے حقوق کے تحفظ کے ساتھ ان قوانین کو یکجا اور آسان بنایا جا رہا ہے،سوشل سکیورٹی ہسپتالوں میں پرائیویٹ مریضوں کو بھی ایمرجنسی سروسز فراہم کی جائیں گی، ان خیالات کا اظہار انہوں نے چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، صدر چیمبر آف کامرس نعیم امتیاز، سابق صدور چوہدری وحید الدین، علی انصر گھمن، طارق بلال، سید آصف نقوی،امتیاز کوثر، حاجی ناصر محمود، ڈاکٹر عابد غوری، ڈاکٹر آصف محمود بھی موجود تھے۔سیکرٹری لیبر اینڈ ہیومن ریسوریس پنجاب لیاقت علی چٹھہ نے سوشل سکیورٹی ہسپتال، ورکرز ویلفیئر سکول، رشیدہ شفیع ٹراما سنٹر کا بھی فوری کیا اور کڈنی سنٹر میں بورڈ آف گورنرز کے ممبران سے ملاقات کی اور مریضوں کی عیادت کی جبکہ سروس انڈسٹری میں فیئر پرائس شاپ کا افتتاح کیا۔ سیکرٹری لیبر اینڈ ہیومن ریسورس نے کہا کہ پنجاب میں سوشل سکیورٹی ڈیپارٹمنٹ کے 70 سکول ہیں، تمام سکولوں میں سٹوڈنٹس کو مفت ٹرانسپورٹ، یونیفارم، کتابیں دی جارہی ہیں، گجرات کے علاقہ سرخپور میں مسلم لیگ ق کے مرکزی راہنما چوہدری وجاہت حسین کی کاوشوں اور حکومت پنجاب کے فنڈز سے بننے والے نئے ورکرز ویلیفیئر سکول کی بلڈنگ تیار ہے جلد فنکشنل کر دیا جائے گا، یہاں پرائیویٹ طلبہ کا کوٹہ بڑھایا جائے گا جبکہ وزیر آباد ورکرز ویلفیئر سکول کو انٹر میڈیٹ تک اپ گریڈ کر دیا گیا ہے۔ انہوں بتایا کہ لیبر ڈیپارٹمنٹ کے پاس اس وقت ڈیتھ گرانٹ، میرج گرانٹ، سکالر شپس کے 33 ہزار کیسز زیر التوا ہیں،وزیر اعلی پنجاب کی ہدایات کے مطابق 31 دسمبر تک ان تمام کیسز کی مد میں 16 ارب روپے کی ادائیگی کر دی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ فیکٹریوں کی انسپکشن کا طریقہ کار تبدیل کر دیا گیا ہے، آئندہ جن اداروں کی ایک بار جانچ پڑتا ل ہوگی اسکی دوبارہ انسپکشن پانچ سال بعد ہوگی جبکہ جن اداروں کو انسپکشن کیلئے منتخب کیا جائے گا ان کے بارے میں متعلقہ چیمبر آف کامرس کو بھی آگاہ کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کاروباری افراد اپنے ورکرز کی ترجیحی بنیادوں پر سوشل سکیورٹی میں رجسٹریشن کروائیں، مستقبل میں آن لائن سسٹم بنایا جا رہا ہے جس کے تحت میرج گرانٹ، ڈیتھ گرانٹ، سکالرشپ کے لیے آن لائن اپلائی کیا جا سکے گا، کوشش کر رہے ہیں کہ آئندہ کسی مزدور کی ناگہانی موت کی صورت میں 72 گھنٹے میں امدادی چیک مزدور کی فیملی کو پہنچا دیا جائے، اسکے علاوہ ڈائریکٹر لیبر اور ڈپٹی ڈائریکٹر لیبر کے دفاتر میں ون ونڈو سنٹر بنایا جائے گا۔ سیکرٹری لیبر اینڈ ہیومن ریسورس پنجاب لیاقت علی چٹھہ نے کہا کہ نئے کاروبار کی رجسٹریشن کے لیے فیس ختم کر دی گئی ہے، کاروباری افراد انٹرنیٹ سے آن لائن فارم ڈاؤن لوڈ کریں، اپنا ڈیٹا پر کرکے اپ لوڈ کر دیں اسی وقت رجسٹریشن ہو جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ سندر انڈسٹریل اسٹیٹ کے ساتھ نئی لیبر کالونی تیار ہے واجبات کی ادائیگی میں تاخیر پر ہونے والے جرمانے کم کرنے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ رجسٹریشن کے لیے مزدوروں کی تعداد 5 سے بڑھا دی گئی ہے آئندہ 10 سے زائد مزدوروں والے کاروباری افراد کے لیے رجسٹریشن لازم ہوگی، نئے قوانین میں انڈسٹریل کیساتھ زرعی، گھریلو، ٹھیکیدار کیساتھ کام کرنے والے مزدوروں کو بھی شامل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ڈی جی خان میں اسٹیٹ آف دی آرٹ کینسر ہسپتال بنایا جا رہا ہے، گجرات ہسپتال میں بھی کینسر ڈیپارٹمنٹ بنایا جائے گا، سوشل سکیورٹی ہسپتال گجرات میں چار سرجن، 13 ڈاکٹر تعینات کر دیے گئے ہیں، ادویات کی کمی کا مسئلہ جلد حل کر دیا جائے گا۔

By admin