ڈنگہ (عبدالمجید پپو) ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج منڈی بہاوالدین پریذائیڈنگ آفیسر کنزیومر کورٹ منڈی بہاوالدین راؤ عبدالجبار کی طرف سے توہین عدالت کیس میں سزا یافتہ معطل ہونے کے باوجود چیف سیکرٹری پنجاب کامران علی افضل نے ڈپٹی کمشنر منڈی بہاوالدین طارق علی بسراء‘ اسسٹنٹ کمشنر منڈی بہاوالدین امتیاز علی بیگ کو فوری تبدیل کر کے OSD بنا دیا ہے۔ ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ریونیو منڈی بہاوالدین احسان الحق ضیاء کو ڈپٹی کمشنر کا اضافی چارج دیا گیا ہے۔ ادھر آئی جی پنجاب نے DPO منڈی بہاوالدین ساجد کھوکھر کو عدالت سے بدتمیزی کے دوران صورت حال پر قابو نہ پانے پر فوری تبدیل کرتے ہوئے سنٹرل پولیس آفس رپورٹ کرنے کی ہدایت کی ہے۔ جبکہ ایس پی انویسٹی گیشن منڈی بہاوالدین انور سعید کو DPO منڈی بہاوالدین کا اضافی چارج دے دیا گیا ہے۔ ادھر ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کی عدالت میں گھس کر تشدد کرنے اور عدالت سے باہر نکال کر عدالت کو تالا لگانے کے الزام میں ڈپٹی کمشنر‘ اسسٹنٹ کمشنر‘ صدر و جنرل سیکرٹری منڈی بار سمیت وکلاء کے خلاف تھانہ سول لائن منڈی بہاوالدین میں مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ راؤ عبدالجبار نے اندراج مقدمہ کے لئے دی گئی درخواست میں کہا کہ میں 30 نومبر کو تقریباً 11 بج کر 50 منٹ پر اپنی عدالت میں بیٹھا تھا کہ اچانک وہاں جنرل سیکرٹری بار ایسوسی ایشن منڈی بہاوالدین یاسر عرفات‘ مطیع الرحمن رانجھا ایڈووکیٹ‘ اورنگزیب گوندل ایڈووکیٹ‘ذیشان گوندل ایڈووکیٹ دیگر وکلاء صاحبان آ گئے اور میرے ساتھ تلخ کلامی شروع کر دی اور کہا کہ تم نے ڈپٹی کمشنر طارق بسراء‘ اے سی امتیاز بیگ اور لیٹی گیشن يآفیسر رانا محبوب کے خلاف کیا تماشا لگا رکھا ہے۔ یہ ساری کاروائی ختم کرو اور صدر بار کے خلاف توہین عدالت کا نوٹس واپس لو میں نے معذرت کی کہ یہ نہیں ہو سکتا کیونکہ اس کی آج تاریخ پیشی بھی نہیں ہے۔ جس پر وکلاء غصہ میں آ گئے اور گالم گلوچ کرتے ہوئے کورٹ روسٹم پر آ گئے اور میرے ساتھ ہاتھا پائی شروع کر دی مجھے کرسی سے کھینچنے اور گالیاں دینے لگے اور بازوؤں سے پکڑ کر زبردستی مجھے چیمبر میں لے گئے اور مکے مار کر صوفہ پر گرا دیا۔ شدید تشدد کیا اور غلیظ گالیاں دیں۔ میں صوفہ سے اٹھ کر کرسی پر آ گیا تو وہاں بھی مجھے مارتے رہے۔ کافی تشدد کے بعد مجھے کھینچ کر باہر برآمدے میں لے آئے اور کہا کہ یہ تمہاری گاڑی ہے عدالت سے نکل جاؤ ورنہ تمہیں مارتے ہوئے گاڑی پر بٹھائیں گے۔ میرا ڈرائیور ذرا فاصلے پر تھا اس لئے کچھ وقت لگا۔ یہ سارا واقعہ طارق علی بسراء ڈپٹی کمشنر‘ امتیاز علی بیگ اے سی‘ زاہد یار گوندل صدر بار اور رانا محبوب علی لیٹی گیشن افیسر منڈی بہاوالدین کی ایماء پر ہوا ہے۔ انہوں نے لکھ کر بھیجا تھا کہ اس طرح اس پر تشدد کرو۔ وجہ عناد یہ ہے کہ میں نے مورخہ 24/11/21 کو رانا محبوب علی کو سزا سنائی اور 26/11/21 کو ڈپٹی کمشنر اور اے سی منڈی کو بھی سزا سنائی۔ اس روز بھی صدر بار زاہد یار گوندل نے چیمبر میں آ کر مجھے شدید دھمکیاں دی تھیں۔ پولیس تھانہ سول لائن نے راؤ عبدالجبار کی درخواست پر ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے۔

By admin